Kahi k rang main hun An kahi ka admi hun ||Imran Aami urdu poetry

Imran Ammi  urdu poetry



کہی کے رنگ میں ہوں اَن کہی کا آدمی ہوں 

میں شور کرتی ہوئی خامشی کا آدمی ہوں 


میں ایک شعر ہوں سینہ بہ سینہ چلتا ہوا 

کسی کے دل میں ہوں لیکن کسی کا آدمی ہوں 


یہ دین و دُنیا مرے راستے میں پڑتے ہیں 

یہ جانتے ہیں مجھے کس گلی کا آدمی ہوں 


کسی زمانے میں موسیٰ کے ساتھ دیکھا گیا 

اور اِن دنوں میں کسی سامری کا آدمی ہوں 


میں انتظار ہوں گلیوں میں خوار ہوتا ہوا 

میں ایک بھول ہوں یاد آوری کا آدمی ہوں 


فرشتے دیکھ کے حیران ہو رہے ہیں مجھے 

خُدا کے ساتھ ہوں اور آدمی کا آدمی ہوں


میں ایک پھول ہوں کیچڑ میں مسکراتا ہوا 

میں سانس لیتی ہوئی زندگی کا آدمی ہوں 


یہ قبل و بعد کے قصے فضول قصے ہیں 

ہر ایک عہد میں تھا ہر صدی کا آدمی ہوں 


یقیں دِلاتا پھروں کس لیے تجھے ' عامی 

ترے گمان میں جو ہے' اُسی کا آدمی ہوں


... عمران عامی 


Kahi k rang main hun An kahi ka admi hun 

Maen shor krti hui khamoshi ka admi hun 


Maen aik shear hun sina ba sina chalta hua 

kisi k dil main hun lakin kisi ka admi hun 


Ye deen o dunya mere raste main parte hen 

Ye jante hen mujhe kis gali ka admi hun 


Kisi zamane main musa k sath daikha gya 

Aur in dinon maen kisi saamri ka admi hun 


Maen intzar hun galiyon main khwar hota hua 

Maen aik bhol hun yad awari ka admi hun 


Frishte daikh k hairan ho rahe hen mujhe 

Khuda k sath hun or admi ka admi hun 


Maen aik phol hun kichar main muskrata hua 

Maen saans laiti hui zindgi ka admi hun 


Ye qabl o bhad k qisse fazol qisse hen 

Har aik ehd main tha har sadi ka admi hun 


Yaqeen dilata phiron kis liay tujhe ' Aami 

Tere guman main jo hai usi ka admi hun 

#ImranAami

Post a Comment

To be published, comments must be reviewed by the administrator *

Previous Post Next Post
Post ADS 1
Post ADS 1